زبان لگاتے جاؤ وزن گھٹاتے جاؤ مٹکے جیسا پیٹ بھی صراحی جیسا ہوجائے گا۔

جہاں بات ہو موٹاپے کی وہاں ایک چیز ذہن میں ضرور آتی ہے اور وہ ہے باہر نکلا ہوا پیٹ پیٹ کا باہر نکل جانا ایک ایسا مرض ہے جس کا شکار صرف موٹے افراد نہیں ہیں بلکہ کمزور لوگوں کا بھی پیٹ باہر نکل جاتا ہے باہر نکلے پیٹ کی دو ہی وجوہات ہوتی ہیں یا تو پیٹ پر چربی کی تہہ جم جاتی ہے یا پھر پیٹ میں گیس بھر جاتا ہے یہ دونوں ہی الگ الگ بیماریاں ہیں لیکن ان دونوں کی بنیادی وجہ ہماری زبان ہی ہے جی ہاں زبان کے ذائقے کی ہی وجہ سے آپ کا پیٹ باہر نکل آتا ہے اور وزن بڑھتا ہے اس کا علاج زبان سے ہی کرنے کا طریقہ بتایا جارہا ہے اگر آپ وزن اور پیٹ کم کرنے کے ٹوٹکے آزما آزما کر تھک گئے ہیں تو اس طریقے کو اپنا لیں صرف پندرہ دن میں آپ اپنے اندر حیرت انگیز تبدیلی دیکھیں گے جو کہ ہزاروں روپے کی دوائیاں کھا کر بھی حاصل نہیں ہوتی۔ان باتوں کو ذہن نشین کر لیجئے سب سے پہلے آپ نے اپنے کھانے پینے کے انداز کو بدلنا ہے اس کا یہ مطلب ہر گز نہیں ہے کہ آپ کھانا پینا ہی چھوڑ دیں بس آپ نے وہ چیزیں اپنی زندگی سے نکال دینی ہیں جو آپ کو پسند ہیں مانا کہ یہ کافی مشکل مرحلہ ہوگا لیکن ایسا کرنا ضروری بھی ہے جو کھانے آپ کو اچھے لگتے ہیں آپ انہیں ترک کر دیں

اور ان کی بجائے وہ کھانے کھائیں جو آپ کو پسند نہیں یقین مانئے یہ وہ حربہ ہے جو آپ کے جسم میں ایسی تبدیلی لائے گا جو آپ نے کبھی سوچی بھی نہیں ہو گی آپ کا وزن پیٹ بھر کر کھانا کھانے کے باوجود بھی کم ہونے لگے گا اس کے علاوہ ہمیشہ چھوٹی پلیٹ میں کھانا کھائیں کیونکہ چھوٹی پلیٹ میں کھانا ہمیشہ زیادہ لگتا ہے بہ نسبت بڑی پلیٹ کے اور ہمارا ذہن یہ مان لیتا ہے کہ ہم نے کھانا زیادہ کھا لیا ہے اس کے علاوہ آپ نے بس ایک آخری کام یہ کرنا ہے کہ آپ نے میٹھے کو خیر باد کہہ دینا ہے میٹھائی وغیرہ سے مکمل پرہیز کریں مٹھائی ہمارے جسم میں شوگر لیول کے ساتھ ساتھ چربی کو بھی بڑھاتی ہے بس آپ نے ان مختصر سی باتوں پر عمل کرنا ہے پھر دیکھئے گا کہ آپ کا وزن کتنی تیزی سے کم ہوتا ہے کسی بھی ٹوٹکے کی آپ کو ضرورت نہیں پڑے گی۔ باہر کھانا کھانے کا رواج عام ہو چکا ہے۔ہر خاص وعام بازار کے کھانوں کا شوقین نظر آتا ہے۔جگہ جگہ فوڈ اسٹریٹ قائم ہو چکی ہیں۔

جن میں طرح طرح کے کھانے دستیاب ہوتے ہیں۔ہر ویک اینڈ پر باہر جاکر کھانا کھانا سب سے مقبول تفریح بن چکی ہے۔باہر کے کھانے دیکھتے ہی منہ میں پانی بھر آتا ہے لیکن یہ کس طرح تیار ہوتے ہیں اکثر لوگ اس سے نا واقف ہیں۔جب ہم اپنا کھانا خود تیار کرتے ہیں تو اس بات کو یقینی بناتے ہیں کہ اس میں استعمال ہونے والی ہر چیز صاف ستھری اورخالص ہو۔اس کی تیاری میں کوئی مضر صحت چیز شامل نہ ہو۔جب ہم یہی چیز باہر کھاتے ہیں تو وہ اچھی تو بہت لگتی ہے لیکن اس کے صاف ستھراہونے کی کوئی گارنٹی نہیں ہوتی۔فوڈ اسٹریٹ اور ریستورانوں میں تیار شدہ یہ کھانے صحت کے لئے بہت نقصان دہ ہیں۔جو انسانی جسم کو نقصان پہنچانے کا باعث بنتے ہیں۔اللہ ہم سب کا حامی وناصر ہو۔آمین

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.