سرگودھا‘ کم عمری میں ادھیڑ عمر سے شادی‘دلہن نے پولیس بلوا کر باپ اور دولہا کو ہتھکڑیاں لگوا دیں

سرگودھا شہر میں کم عمری میں ادھیڑ عمر سے شادی کے انکار پر باپ نے جوڑا عروسی میں ملبوس 12 سالہ بیٹی کو قید کر کے رخصتی کے لئے بارات بلوائی تو دولہن نے پولیس کو بلوا کر باپ اور دولہا کو ہتھکڑیاں لگوا دیں جس پر پولیس نے لڑکی کا بیان قلم بند کر کے اپنی مدعیت میں 4/5/6چائلڈ میرج ایکٹ اور دیگر دفعات کے تحت مقدمہ درج کر کے تفتیش کا دائرہ کار وسیع کر کے دیگر ملزمان کی تلاش شروع کر دی ہے

۔ذرائع کے مطابق سرگودھا شہر کے علاقہ بابو محلہ کے رحمان اللہ پٹھان نے رقم کے لالچ میں اپنی 12 سالہ بیٹی ملیحہ بی بی کا بوگس نکاح بلاک 32 کے پلے دار31 سالہ محمد مشتاق عرف ندیم کر دیا اور گزشتہ روز بیٹی کو جوڑا عروسی پہنا کر رخصتی کے لئے بارات بلوائی تو دولہن نے کم عمری میں ادھیڑ عمر کے ساتھ شادی سے انکار لیا تو باپ نے جوڑا عروسی میں ملبوس 12 سالہ بیٹی کو کمرے میں قید کر کے بارات کو استقبال کیا تو دولہن نے 15 پر کال کر کے پولیس بلوا لی جس نیچھاپہ مار کر باپ کی قید سے بچی کو آزاد کروا کر باپ رحمان خان ،دولہا محمد مشتاق اور اس کے بھائی محمد اشفاق کو گرفتار کر لیا جبکہ دیگر باراتی فرار ہو گے پولیس تھانہ فیکٹری ایریا نے جوڑا عروسی میں ملبوس دولہن کو اہنی تحویل میں لیکر اے ایس آئی حامد علی کی مدعیت میں کم عمر بچی کی شادی کرانے پر بچی کے

والد رحمان اللہ اور کمسن بچی سے شادی رچانے والے دولہا محمد مشتاق عرف ندیم،اس کے بھائی محمد اشفاق وغیرہ کے خلاف 4/5/6 چائلڈ میرج ایکٹ ذور 342/420 ت پ مقدمہ درج کرلیا۔اور تفتیش کا دائرہ کار وسیع کر کے دیگر ملزمان کی گرفتاری کیلئے چھاپے مارے جا رہے ہیں۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.