”دو بار میں ہی ہاتھوں پیروں کی سوجن کا خاتمہ۔ آسان اور اثر دار گھر یلو نسخہ۔“

ہم میں سے بہت سے لوگ اکثر سنسنی خیز چیزوں کو انجوائے کرتے ہیں، تھرل کو پسند کرتے ہیں۔ اکثر ہم ایسی چیزیں دیکھتے، سنتے اور پڑھتے ہیں جن سے ہمارے بدن میں سنسنی سی دوڑ جاتی ہے۔ یہ سنسنی کیا ہوتی ہے؟ بات سنسنی تک تو ٹھیک ہے لیکن اگر بدن سنسنی کے بجائے سن ہونا شروع ہو جائے تو پھر معاملہ خراب بھی ہو سکتا ہے۔آج ہم جانیں گے بدن سن ہونے کے حوالے سے۔ سن ہونا کیا ہوتا ہے، کیسے ہوتا ہے، کیوں ہوتا ہے اور کس چیز کی علامت ہو سکتا ہے؟

ہاتھ پاؤں کا سن ہو جانا عام بات ہے ، اس صورت میں سن ہوئے والے حصے میں کچھ محسوس نہیں ہوتا اور سوئیاں چبھتی ہوئی محسوس ہوتی ہیں۔ عام طور پر غلط انداز میں بیٹھنے سے، جیسے آلتی پالتی مار کر بیٹھنے سے ایسا ہو جاتا ہے یا ہم اگر بہت دیر تک ایک ہی انداز میں بیٹھے رہیں یا سوتے رہیں تو ہاتھ یا پیر سن ہو جاتا ہے۔ ایسا ہونا نارمل بات ہے اور ایسا ہر کسی کے ساتھ ہوتا ہے مگر عارضی طور پر ہوتا ہے اور جسم کو حرکت دینے پر ختم ہو جاتا ہے۔

اصل میں ہماری جلد میں جو سینسیشن ہوتی ہے، جو حسیات ہوتی ہیں ، وہ سگنلز کی وجہ سے ہوتی ہیں اور سگنلز لانا اور لے جانا کام ہے اعصاب کا ، جن کو ہم انگریزی میں nerves کہتے ہیں۔ ہاتھ پاؤں سن ہونے کی شکایت زیادہ تر عمر رسیدہ لوگوں کو ہوتی ہے یا پھر ان افراد کو اس کیفیت سے گزرنا پڑتا ہے جو کھانے میں سبزی حد سے زیادہ تناول کرتے ہیں کیونکہ ایسے افراد خون کی کمی کا شکار ہوتے ہیں اور ان کے جسم میں وٹامن بی بارہ کی کمی واقع ہو جاتی ہے۔

جو انیمیا یعنی خون کی سپلائی کم ہونے اور اعصابی نظام کو نقصان پہنچانے کا باعث بنتی ہے۔کارپل ٹنل سینڈروم: اس عارضے میں ہتھیلی میں موجود اعصاب متاثر ہوتے ہیں، جس کے نتیجے میں ہاتھ اکثر سن رہنے لگتا ہے جبکہ درد، سنسناہٹ، سوئیاں چبھنے، جلن اور کمزوری جیسی علامات بھی سانے آتی ہیں، یہ عارضہ بہت زیادہ کمپیوٹر استعمال کرنے والوں میں ہو سکتا ہے۔ذیابیطس: ذیابیطس میں اکثر مریض ہاتھ پیر سن ہو جاتے ہیں، ان میں سوئیاں چبھنے یا جھنجھناہٹ کا حساس ہوتا ہے، اس کی وجہ ہائی بلڈ شوگر کے نتیجے میں اعصاب کو پہنچنے والا نقصان ہوتا ہے۔

عضلاتی درد: اگر آپ کو پورے جسم میں درد کے پھیلنے اور دیر تک تھکاوٹ کا احساس ہو اور بہت دیر تک رہے اور عام ادویات سے ٹھیک نہ ہو تو یہ فائبرو مائیلجیا یعنی ریشہ دار عضلاتی درد ہو سکتا ہے جس کے شکار افراد کو ہاتھوں اور بازووں کے سن ہونے اور ان میں سوئیاں چبھنے کا احساس بھی ہوتا ہے۔کچھ ادویات بھی اعصاب کو نقصان پہنچاتی ہیں اور یہ تکلیف دوا کے ترک کرنے کے بعد ختم ہو جاتی ہے۔ ان دواؤں میں ایڈز اور کینسر کے علاج میں استعمال ہونے والی ادویات یعنی کیمو تھراپی کی ادویات شامل ہیں۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.